Pakistan to Build Massive Dams. CPEC

پاکستان اور چین کا پاکستان کے علاقے گلگت بلتستان میں دو میگاڈیموں کو فنانس کرنے اور اس کی تعمیر کرنے پر اتفاق ۔
بیجنگ میں بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو (بی آر آئی)کے سربراہی اجلاس کے موقع پر دونوں ممالک کے لیڈروں نے اس کی ترقی کے لئے مفاہمت کی یادداشت (ایم او یو) پر دستخط کئے۔
بنجی اور ڈائمر-بھاشا کے نام سے دو منصوبوں کے ڈیم جو کہ بالترتیب 100 میگاواٹ اور 4،500 میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھیں گے. میڈیا رپورٹس کے مطابق، چین دو ڈیموں کی تعمیر کے لئے 27 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا

:پاکستان کی اپنی بجلی کی صلاحیت
پاکستان کے پانی اور پاور ڈیولپمنٹ اتھارٹی (ڈبليواےپی ڈی اے) کی طرف سے کیے جانے والے ایک سروے اور جائزوں کے مطابق ، پاکستان 59،000 میگاواٹ کی بجلی کی پیداوار کی صلاحیت رکھتا ہے۔ فی الحال، یہ صرف 6،600 میگاواٹ کی بجلی پیدا کر رہا ہے،اپنی کل ا صلاحیات کا تقریبا 11فیصد ہے۔ میڈیا کی خبروں سے ظاہر ہوتا ہے کہ چین پاکستان کی ترقی کےلیےصوبہ خیبر پختون خوا ہ کے شمالی علاقے گلگت بالتستان میں سکردوکے مقام پر 40،000 میگاواٹ کی صلاحیت رکھنے والے ڈیم کی مالی امداد اور تعمیر کرنے کے لئے تیار ہے ۔
دونوں منصوبے دریائے سندھ پرتعمیر کیے جائیں گے۔ اور تربیلہ ڈیم کے ذریعے چلاے جائیں گے۔

  ڈائمر-بھاشا ڈیم 

 تربیلہ ڈیم سے تقریبا 200 میل کے فاصلے پر واقع ہے۔ ، گلگت-بالتستان کے شمالی علاقے کے دارالحکومت گلگت سے 100 میل کے فاصلے پر واقع ہے. یہ 4،500 میگاواٹ بجلی پیدا کرے گا اور اس کے ذخائر میں اتنا پانی ہو جائے گا کہ کسی بھی تباہ کن سیلاب سے بچا جا سکتا ہے۔ پچھلے کچھ سالو ں میں پاکستان میں آنے والے سیلبی ریلے سے پاکستان کا بڑا حصہ متاثر ہوا تھا۔۔ گارڈین اخبار میں ایک رپورٹ کے مطابق، اس سے پاکستان کی بجلی کی کمی بھی پوری ہو سکتی ہے ۔ ڈائمر-بھاشا ڈیم 50 میل لمبا ہو گا اور اس میں پانی کے کل ذخائر 8.5 ملین ایکڑ فٹ (ملین ایکڑ فٹ) ہوں گے۔

cpec1

:موسمیاتی تبدیلی

کاربن کے اخراج کے ذریعے پاکستان نے موسمیاتی تبدیلی میں صرف ایک چھوٹا سا کردار ادا کیا ہے. لیکن پھر بھی، یہ درجنوں ایسے ممالک میں شمار کیا جاتا ہے، جو اپنے مضر اثرات کے لئے سب سے کمزور ہیں. ان میں بڑھتے ہوئے درجہ حرارت، سیلاب اور خشک سالی کے بار بار چلنے والی سائیکل اور خوراک کی پیداوار میں رکاوٹ پیدا ہونے کی شمولیت ہے.
ایک طرح سے پاکستان کاربن کے اخراج کو کم کرنے میں مدد کر سکتا ہے اور مزید ڈیموں کی تعمیر سے 40،000 میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی اصلاحیات رکھتا ہے۔ اس سے پاکستان کے شمالی علاقے ترقی کریں گے اور پاکستان میں خوشحالی بھی آئے گی۔

cpec5

:خلاصہ
پاکستان کو کافی مقدار میں پانی اور توانائی کے وسائل درپیش ہیں۔ چین پاکستان اقتصادی کوریڈور کے ذریعے پاکستان میں تیزی سے اقتصادی ترقی پروان کر رہی ہے۔ ایسا ظاہر ہوتا ہے کہ چینی سرمایہ کاری سے ہم بجلی کے ہزاروں میگاواٹ اور لاکھوں ایکڑ فٹ اضافی پانی کے ذخائر بھی جمع کر لیں گے۔ امید ہے کہ ہم پاکستان کی معیشت میں خاترخوا ہ بہتری لیں گے اور اپنے لوگوں میں خوشحالی لے آئے گے۔